Home / pakistan News / زرداری ہاؤس اسلام آباد میں پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے افطار ڈنر کا اہتمام, ن لیگ کے وفد نے شرکت

زرداری ہاؤس اسلام آباد میں پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے افطار ڈنر کا اہتمام, ن لیگ کے وفد نے شرکت

زرداری ہاؤس اسلام آباد میں پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے افطار ڈنر کا اہتمام کیا جس میں ملک کی سیاسی جماعتوں کے رہنماؤں نے شرکت کی، بلاول بھٹو نے تمام مہمانوں کا استقبال کیا۔
دعوت افطار میں ن لیگ کے وفد نے شرکت کی جس کی قیادت نواز شریف کی صاحبزادی اور پارٹئی کی نائب صدر مریم نواز نے کی، ان کے ہمراہ حمزہ شہباز، شاہد خاقان عباسی، ایازصادق، مریم اورنگزیب بھی موجود تھیں۔

اس کے علاوہ دیگر مہمانوں میں حاصل بزنجو ،لیاقت بلوچ، میاں اسلم، اے این پی کے زاہدخان،میاں افتخار بھی موجود تھے۔ افطارڈنر میں راجہ پرویز اشرف، شیری رحمان، فرحت اللہ بابر، نیئربخاری، جمیل سومرو، اخونزادہ چٹان، آفتاب شیرپاؤ، ایمل ولی خان،جہانزیب جمال دینی،سردارشفیق شریک تھے۔
بلاول بھٹو کے افطار ڈنر میں محسن داوڑ، علی وزیر نے بھی شرکت کی، افطار ڈنر کے بعد اپوزیشن کا غیر رسمی اجلاس  ہوا، اجلاس کے آغاز میں قمر زمان کائرہ کے بیٹے کے انتقال پر دعائے مغفرت بھی کی گئی ۔
اپوزیشن کا غیر رسمی اجلاس میں نیب کی کارروائیوں پر تشویش کا اظہار کیا گیا، اس حوالے سے ذرائع کا کہنا ہے کہ رہنماؤں نے مہنگائی اور روپے کی گرتی قیمت پر اپوزیشن کا اظہار تشویش کیا۔
اپوزیشن جماعتوں نے پیٹرول اور گیس کی قیمتوں میں اضافہ مسترد کردیا، ذرائع کے مطابق رہنماؤں کا کہنا تھا کہ حکومت کی ناقص پالیسیوں سے ملک میں بحرانی کیفیت ہے، ڈالر کی بڑھتی ہوئی قیمت سے عام آدمی کا جینا دو بھر ہوچکا ہے۔

جمہوریت بہترین انتقام ہے. بیانیہ بدل رہا ہے اور نسلیں بھی. وقت آ گیا ہے ایک نئی قیادت کا اور نئے مثبت بیانیے کا. غیر جمہوری طاقتوں اور آمروں کے خلاف نئی صف بندی انتہائی ضروری ہے. یہ تصویر اور کیپشن بہت سوں کے جلنے کے کافی ہے. ردعمل کے طور پر الٹے سیدھے کمنٹ بھی ملاحظہ فرمائیں اور بیس سال سے تیار ہوتی ایک ایسی نسل سے متعارف ہوں جن کی صبح کا آغاز بھی گالی سے ہوتا ہے اور رات کا اختتام بھی. اخلاق اور دلیل سے عاری اور ہر بات کا گالی سے جواب دینے والی نسل تیار کرنے پر عمران نیازی کا شکریہ بھی ادا کریں
اسلام آباد: پیپلزپارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے کہا ہے کہ عید الفطر کے بعد اپوزیشن جماعتیں ایوان کے اندر اور باہر حکومت کے خلاف علیحدہ علیحدہ احتجاج کریں گی۔
دعوتِ افطار کے بعد اپوزیشن رہنماؤں کی مشترکہ پریس کانفرنس ہوئی جس میں بلاول بھٹو،شاہدخاقان عباسی ، مریم نواز ،حمزہ شہباز ، مولانافضل الرحمان، حاصل بزنجو  اور دیگر سیاسی رہنما شریک تھے۔
بلاول بھٹو نے افطار پر آنے والے تمام رہنماؤں کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ ویسے تو ہر سیاسی جماعت کا اپنا منشور اور اپنا نظریہ ہے، مگر کوئی بھی سیاسی جماعت تنہا مسائل کا حل نہیں نکال سکتی۔ انہوں نے بتایا کہ اپوزیشن کوسیاسی،معاشی صورتحال اوردیگر اہم امور پر بات کرنے کا موقع ملا، تمام جماعتوں نے مستقبل میں بھی رابطے جاری رکھنے پر اتفاق کیا۔
اُن کا کہنا تھا کہ اپوزیشن جماعتیں مل بیٹھیں گی تو بہترین پالیسی، مسائل کا حل نکال سکیں گے، عید کے بعد اپوزیشن جماعتیں پارلیمنٹ کےاندراور باہر احتجاج کریں گی تاہم اُس سے قبل مولانافضل الرحمان کی سربراہی میں آل پارٹیز کانفرنس ہوگی جس میں لائحہ عمل طے کیا جائے گا، ملک کے مسائل کےحل کیلئے اپوزیشن اپنا کردار ادا کرتی رہے گی۔
بلاول بھٹو کی دعوت افطار، اہم سیاسی رہنماؤں کی شرکت
جمعیت علمائے اسلام ف کے سربراہ مولانا فضل الرحمان کا کہنا تھا کہ سیاسی جماعتوں کو افطارپربلانے پرآصف زرداری کا شکریہ اداکرتاہوں، افطار کےموقع پرملکی صورتحال پر گفتگو اور بات چیت کا موقع ملا،ملک کو چیلنجز کاسامنا ہے اور ہم مل کر ملک کو اس صورت حال سے باہر نکالیں گے۔
مولانا فضل الرحمان کا کہنا تھا کہ ملک کو سنبھالنا قومی فریضہ ہے جس کیلئے ہم سب آج جمع ہوئے، مشترکہ حکمت عملی بنانے کے لیے آل پارٹیز کانفرنس کاانعقاد ہوگا، اپوزیشن نے عیدکےبعدآل پارٹیز کانفرنس کی ذمہ داری مجھے دی ہے، جس کے انعقاد کا اعلان جلد کیا جائے گا۔
انہوں نے دعویٰ کیا کہ تمام سیاسی جماعتیں ایک پلیٹ فارم اور حکمت عملی کیساتھ میدان میں آئیں گی اور ہماری کوشش ہوگی ایک ہی کاز کےساتھ میدان میں اتریں، سیاسی جماعتیں ایک پلیٹ فارم سے عوام کی آواز بننے کی کوشش کریں گی۔
مسلم لیگ ن کے نائب صدر شاہد خاقان عباسی کا کہنا تھا کہ اپوزیشن میں اتفاق ہے کہ حکومت عوام کے مسائل حل کرنے میں ناکام ہوچکی، احتساب کے بعد پر اپوزیشن کو دبانے کی کوشش ہورہی ہے، بدقسمتی سےموجودہ صورتحال میں مہنگائی کا سیلاب   تھمنے والا نہیں ہے۔
نیشنل پارٹی کے صدر میر حاصل بزنجو کا کہنا تھا کہ اپوزیشن کی اےپی سی ملک میں تاریخی طورپر نئے اتحاد کو جنم دےگی ، ملک میں اسوقت مضبوط سیاسی اتحاد کی ضرورت ہے، حکومت کو گرانے کی ضرورت نہیں کیونکہ 60 فیصد اپوزیشن اراکین حکومت کے ساتھ ہیں اور اگر سب مل کر مستعفیٰ ہوں تو حکومت خود بہ خود ختم ہوجائے گی۔

اسلام آباد : اپوزیشن جماعتوں کے افطار ڈنر پر وزیر اعظم عمران خان کا ردعمل
انہوں نے اسلام آباد میں شوکت خانم اسپتال کی فنڈ ریزنگ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے زرداری ہاؤس میں اپوزیشن جماعتوں کے افطار ڈنر کے حوالے سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔
عمران خان نے کہا کہ آج کچھ لوگ جمہوریت بچانے کے لئے جمع ہوئے ہیں، یہ سارےوہ لوگ ہیں جن کی وجہ سےپاکستان آگےنہ بڑھ سکا، مشکل وقت میں قوم کو حوصلہ دینے کی ضرورت ہوتی ہے۔

پاکستانی عوام اس ملک کی ترقی کی امید ہیں، ملک اس وقت معاشی طور پر مشکل صورتحال سے گزر رہا ہے، معاشی مشکلات کے باوجود ثابت کرکے دکھاؤں گا کہ یہ ملک ترقی کرسکتا ہے۔
وزیراعظم عمران خان کا مزید کہنا تھا کہ لوگ کہتے تھے کہ ورلڈ کپ نہیں جیت سکتا وہ بھی جیت لیا، کہتے تھے کہ اسپتال نہیں بنا سکتا وہ بھی بنا دیا، لوگ کہتے تھے کہ ملک سے دو پارٹی سسٹم ختم نہیں ہو سکتا وہ بھی کر کے دکھا دیا۔

ایسا پاکستان سنبھالا ہے جس کے تاریخ میں سب سے مشکل حالات تھے،70سالہ تاریخ میں سب سے زیادہ قرضہ اور خسارہ ورثے میں ملا، اپنی عوام کوآج کہہ رہا ہوں یہ ملک ضرورترقی کرے گا۔
وزیراعظم نے شوکت خانم اسپتال کی فنڈ ریزنگ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے مزید کہا کہ تقریب کے شرکا کا خیرمقدم کرتا ہوں، ڈاکٹر فیصل اور ڈاکٹرعاصم کی خدمات کو خراج تحسین پیش کرتاہوں۔

شوکت خانم اسپتال لاہورکو انٹرنیشنل سرٹیفکیشن مل چکا ہے، شوکت خانم اسپتال میں75فیصدمریضوں کا مفت علاج ہوتا ہے، اگلے ماہ شوکت خانم اسپتال پشاور کو بھی انٹرنیشنل سرٹیفکیشن ملےگا۔
ہماری قوم کی سب سےبڑی طاقت فلاحی کاموں میں حصہ لینا ہے، شوکت خانم اسپتال عظیم قوم نے بنایا ہے اور وہی اسےچلارہی ہے، دنیا میں شوکت خانم جیسے اسپتال کی مثال نہیں ملتی۔

About admin

Check Also

مریم نواز کی حکومت پر کڑی تنقید

مسلم لیگ (ن) کی نائب صدر مریم نواز نے دعویٰ کیا کہ ان کے دور …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *