Home / international news / مسلمانوں کے خلاف بیان پر آسٹریلوی سینیٹر کو انڈا مارنے والا نوجوان ہیرو بن گیا۔

مسلمانوں کے خلاف بیان پر آسٹریلوی سینیٹر کو انڈا مارنے والا نوجوان ہیرو بن گیا۔

مسلمانوں کے خلاف بیان پر آسٹریلوی سینیٹر کو انڈا مارنے والا نوجوان ہیرو بن گیا۔

کرائسٹ چرچ حملے کے بعد مسلمانوں کے خلاف بیان دینے والے آسٹریلیا کے سینٹیر فریزر ایننگ پر انڈا 
پھوڑنے والے نوجوان کو پولیس نے رہا کردیا۔ پولیس نے اس سے قبل نوجوان کو ایک دن کیلئے حراست میں رکھا تھا۔ نوجوان کو بغیر کسی الزام کے رہا کیا گیا۔
واضح رہے کہ نوجوان نے جمعہ کے روز آسٹریلیا کے سینیٹر فریزر ایننگ کو میلبورن میں میڈیا سے گفت گو کے دوران مسلم مخالف بیان دینے پر انڈا مارا تھا۔
واقعہ پر سینیٹر فریزر نے سر پر انڈا پھوڑنے والے لڑکے کو تشدد کا نشانہ بنایا اور اسے لاتیں اور گھونسے بھی مارے تھے۔ 17سالہ لڑکے کا کہنا تھا کہ اس نے اسلامو فوبیا کا مظاہرہ کرنے پر فریزر ایننگ کو انڈا مارا تھا۔

سوشل میڈیا کے مطابق آسٹریلین سینیٹر فراسر ایننگ میڈیا سے بات کر رہے تھے کہ مسلمانوں پر تنقید کی وجہ سے ایک لڑکے نے فراسر ایننگ کے سر پر انڈا مار دیا، آسٹریلین سینیٹر نے فوری ردعمل دیتے ہوئے لڑکے کو گھما کر مکا مارا اور اُس سے ہاتھا پائی شروع کر دی۔آسٹریلین سینیٹر نے گزشتہ روز کرائسٹ چرچ پر مسلمانوں کو نشانہ بنائے جانے کے بعد حملے کا ذمہ دار مسلمانوں کو ہی قرار دیتے ہوئے کہا تھا کہ حملہ دراصل آسٹریلیا اور نیوزی لینڈ کے عوام میں بڑھتی ہوئی مسلم آبادی کے ڈر کا واضح نتیجہ ہے۔
جمعہ کو نیوزی لینڈ کی کرائسٹ چرچ میں نماز جمعہ کے موقع پر دہشت گرد مسجد میں داخل ہوا اور اندھا دھند فائرنگ کر دی تھی جس کے نتیجے میں 50 افراد شہید اور متعدد زخمی ہو گئے

About admin

Check Also

نیوزی لینڈ مساجد حملہ آورکے اسلحے پر عبارت

نیوزی لینڈ کے شہر کرائسٹ چرچ میں جمعے کی نماز کے دوران مساجد پر دہشتگرد …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *